قاری قرآن کا جنت میں مقام

عَنْ عَبْدِ ﷲ بْنِ عَمْرٍو رضي ﷲ عنهما قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ ﷲِ صلي اللہ عليه وآله وسلم : يُقَالُ لِصَاحِبِ الْقُرْآنِ : إِقْرَأْ وَارْتَقْ وَ رَتِّلْ کَمَا کُنْتَ تُرَتِّلُ فِي الدُّنْيَا، فَإِنَّ مَنْزِلَتَکَ عِنْدَ آخِرِ آيَةٍ تَقْرَأُ بِهَا. رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ وَأَبُوْدَاوُدَ.
وَقَالَ أَبُوعِيْسَي : هَذَا حَدِيْثٌ حَسَنٌ صَحِيْحٌ.
’’حضرت عبداللہ بن عمرو رضی اﷲ عنہما روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : قرآن مجید پڑھنے والے سے کہا جائے گا : قرآن پڑھتا جا اور جنت میں منزل بہ منزل اوپر چڑھتا جا اور یوں ترتیل سے پڑھ، جیسے تو دنیا میں ترتیل سے پڑھا کرتا تھا، تیرا ٹھکانہ جنت میں اس جگہ ہو گا جہاں تو آخری آیت تلاوت کرے گا۔‘‘
قاری قرآن خاص اللہ والے
عَنْ أَنَسٍ رضي اللہ عنه قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ ﷲِ صلي اللہ عليه وآله وسلم : إِنَِّﷲِ أَهْلِيْنَ مِنَ النَّاسِ. قَالُوْا : مَنْ هُمْ يَا رَسُوْلَ ﷲِ؟ قَالَ : أَهْلُ الْقُرْآنِ، هُمْ أَهْلُ ﷲِ وَخَاصَّتِهٖ.
رَوَاهُ ابْنُ مَاجَه وَالنَّسَائِيُّ وَأَحْمَدُ وَالدَّارِمِيُّ. وَإِسْنَادُهُ صَحِيْحٌ.
’’حضرت انس رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : لوگوں میں سے کچھ (لوگ خاص) اللہ والے ہوتے ہیں۔ صحابہ کرام رضی اللہ عنھم نے عرض کیا : یا رسول اللہ! وہ کون (خوش نصیب) لوگ ہیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : قرآن پڑھنے والے، وہی اللہ والے اور اس کے خواص ہیں۔‘‘

Leave a Comment